بیوی کو خوش رکھنے کے آسان طریقے

مرد کی زندگی عورت کے بغیر ادھوری ہوتی ہے۔شادی کے بعد بیوی اپنا گھر بار ، بہن بھائیوں ، سہیلیوں اور بہت سے عزیز رشتوں کو چھوڑ کر ایک پرائے دیس ، پرائے گھر آتی ہے۔ اس کو کچھ وقت چاہیے ہوتا ہے تاکہ وہ نئے ماحول کے ساتھ ایڈجسٹ کرسکے۔

شادی کے پہلے دو سال بہت اہم ہوتے ہیں۔ جو مردیہ سال سمجھداری سے گزارتے ہیں، ان کی شریک حیات ہمیشہ ان کے ساتھ خوش و مطمئن رہتی ہے۔ میاں اور بیوی گاڑی کے دو ٹائر ہوتے ہیں اگر گاڑی کا ایک ٹائر خراب ہو جائے تو وہ نہیں چل سکتی، اسی طرح زندگی کی گاڑی کو چلانے کے لیے بھی میاں اور بیوی کا ایک ساتھ چلنا ضروری ہوتا ہے۔

کہا جاتا ہے کہ بیوی کو خوش کرنا دنیا کا سب سے مشکل کام ہے، آپ کچھ بھی کر لیں اپنی بیگم کو کبھی خوش نہیں رکھ سکتے، یہ بات بالکل غلط ہے، کیونکہ بیوی کو خوش رکھنا اتنا بھی مشکل نہیں ہے جتنا کہ سمجھا جاتا ہے، آج کی تحریر میں ہم آپ کو بتائیں گے کہ وہ کون سے کام یا باتیں ہیں کہ جن کے کرنے سے آپ کی بیگم ہمیشہ خوش رہے گی۔

1. بیوی کی تعریف کرنا 

عورت دنیا کی واحد مخلوق ہوتی ہے، جس کی چاہے جھوٹی تعریف کرو یا سچی، وہ فوراً خوش ہو جاتی ہے، اور یہی عورت کی سب سے بڑی کمزوری کہلاتی ہے كہ وہ اپنی تعریف سن کر سب کچھ بھول جاتی ہے، اس لیے شادی کے بعد ایک خوشگوار زندگی گزرنے کا سب سے پہلے فارمولا یہ ہے کہ اپنی بیوی کی تعریف کرتے رہیں، تعریف کرنے کے بہت سے طریقے ہو سکتے ہیں، جیسے :

  • ہفتے میں کم از کم ایک بار اس كے ہاتھ كے بنے کھانے کی تعریف ضرور کریں، چائے كھانا کتنا ہی بدمزہ کیوں نہ ہو، اس کا فائدہ یہ ہو گا كے اگلی دفعہ وہ اور اچھا كھانا تیار کرے گی
  • مہینے میں کبھی کبھار اس کی اداؤں کی تعریف کر دیا کریں، کوئی بھی لڑکی چاہے کیسی بھی ہو، اس میں کوئی نا کوئی ادا ایسی ضرور ہوتی ہے، جو سب سے الگ اور منفرد ہوتی ہے، اس لیے اس ادا کی تعریف کریں۔
  •  مہینے میں کم از کم تین چاربار اس کی ڈریسنگ کی تعریف ضرور کریں، اِس سے وہ ہمیشہ بنی تانی رہے گی۔
  • کبھی کبھار اس کے حسن کی تعریف کر دیا کریں، اس سے وہ اپنی اور کیئر کرے گی۔
  • مہینے میں یہ جملے کبھی کبھار بولنے سے محبت اور بڑھتی ہے۔
  1. تمہارے کیا کہنے، تم سب سے الگ ہو۔
  2. زندگی میں ضرور میں نے کوئی نیک کام کیا ہو گا جو تم ملی ہو۔
  3. میں آج جو اس مقام پہ ہوں، یہ سب تمہاری وجہ سے ہے۔
  4. کاش دُنیا کی ساری لڑکیوں کی سوچ تمہاری جیسی ہوتی۔
  5. کاش تم میری زندگی میں پہلے آ گئی ہوتی۔ تمہاری یہی ادائیں (باتیں) مجھے مار دیتی ہیں.

یہ بھی پڑھیے : بیگم کو اپنی مٹھی میں رکھنے کے لاجواب طریقے

2. آپس میں انڈر اسٹیڈنگ رکھنا 

چونکہ شادی كے بعد باقی ساری زندگی آپ نے اپنی وائف ( بیوی ) کے ساتھ گزرنی ہوتی ہے اس لیے آپس میں انڈر اسٹیڈنگ رکھیں، آپ اس كے جذبات سمجھیں، کیونکہ عورت اوپر ( باہر ) سے چاہے جتنی سخت ہو، اندر سے ( دِل سے ) اتنی ہی نرم اور سینسٹیو ہوتی ہے، آپس میں انڈر اسٹیڈنگ رکھنے سے ایک دوسرے کو سمجھنے میں آسانی ہوتی ہے، اور زندگی کھیل ہے کھیل میں گزر جاتی ہے اور پتا بھی نہیں چلتا۔

3. مشورہ کرنا 

خاوند کو چائیے کے ہر کام میں اپنی بیوی سے مشورہ کرے، بعض دفعہ ہوتا یہ ہے کہ مرد سمجھتا ہے کے عورت ناسمجھ، جاہل اور بے وقوف ہوتی ہے، اس لیے وہ اپنی بیگم سے مشورہ کرنا گوارہ نہیں کرتا، لیکن حقیقت میں ایسا نہیں ہوتا، عورت لاکھ بے وقوف سہی، پر اپنے خاوند کو کبھی غلط مشورہ نہیں دے گی،

فرض کریں آپ کی بیوی آپ کو ہمیشہ غلط مشورہ دیتی ہے، پِھر بھی اس سے مشورہ ضرور لیں، بات صرف مشورے لینے کی ہے، عمل تو آپ نے خود کرنا ہوتا ہے، وہ اپنی مرضی سے کریں، مشورہ کرنے کا یہ فائدہ ہوتا ہے کہ بیگم سمجھتی ہے کہ دیکھو میرا خاوند مجھے کتنی اہمیت دیتا ہے، اس لیے زیادہ نہیں تو مہینے میں ایک دو بار ہی سہی، اپنی گھروالی سے کسی بھی بات پر اس کی رائے ( مشورہ ) ضرور لے لیں۔

4. دوستانہ اور رومینٹک ماحول

اپنی وائف کے ساتھ رومینٹک اور دوستانہ رویہ رکھیں، آپ جتنا اس سے فرینڈلی ہوں گے، وہ آپ کی اتنی عزت کرے گی، اس لیے کوشش کریں کے زیادہ غصہ نہ کریں، بات بات پر بیوی کو نہ ڈانٹیں، اس کے ساتھ دوستانہ تعلقات رکھیں۔

یہ بھی پڑھیے: محبت کیا ہے، یہ کیوں اور کیسے ہوتی ہے

بےشک آپ کی شادی ارینج میرج ہوئی ہو، پر لگنی ایسے چائیے جیسے لو میرج ہوئی ہے۔ رومینٹک اور فرینڈلی ماحول زندگی کو خوشگوار بناتا ہے۔ اس لیے گھر کا ماحول رومینٹک اور فرینڈلی ہونا چائیے، تا كہ ایک پرسکون زندگی بسر کی جا سکے.

5. ہرجائز ڈیمانڈ پوری کرنا 

کوشش کریں کے بیوی کی ہر جائز ڈیمانڈ پوری کریں، اور اسے اپنے مالی حالات کے بارےمیں سب کچھ سچ سچ بتا دیں، تا كہ وہ آپ کی حیثیت کے مطابق آپ سے ڈیمانڈ کرے اگر آپ نے اپنی بیگم سے جھوٹ بولا ہوا ہے۔ اور اسے اپنی حیثیت اپنی اوقات سے بڑھ کر بتائی ہوئی ہے تو آپ کے لیے بہت سارے مسائل ( مشکلات ) پیدا ہو سکتے ہیں۔

اس لیے جہاں تک ہو سکے اپنی بیوی سے سچ بولیں تا كہ وہ آپ سے آپ کی حیثیت کے مطابق ڈیمانڈ کرے اور آپ بھی اس کی ڈیمانڈ کو آسانی سے پورا کر سکیں

6. مہینے میں ایک بار گھمانے لے جانا 

خوشگوار زندگی کے لیے ضروری ہوتا ہے کے آپ مہینے میں کم اَز کم ایک بار اپنی بیوی کو کہیں گھمانے لے جائیں اس کے لیے آپ کسی پارک، کسی ہوٹل، کسی تاریخی جگہ پر بھی جا سکتے ہیں۔ لمبے عرصہ تک گھر میں کام کر کر کے انسان اکتا جاتا ہے اس لیے ریفریشمینٹ ضروری ہوتی ہے۔ آپ کا مہینہ میں ایک بار اپنی فیملی کو باہر آؤٹنگ پہ لا جانا اگلے پورے مہینے كے سکون کا سبب بنتا ہے .

7. بیوی كے کام میں ہاتھ بتانا 

اللہ پاک ہاتھ سے کام کرنے والے کو پسند کرتا ہے۔ زیادہ تر خاوند سمجھتے ہیں کہ اگر میں نے بیوی کی کسی معاملے میں اس کی ہیلپ کر دی تو میری کیا خاک عزت رہ جائے گی یا لوگ کیا کہیں گے کے دیکھو جورو (بیگم) کا غلام ہے یہ سب ہماری سوچ اور ہمارے معاشرہ کی غلط روایات ہیں۔

بیوی کے ساتھ پہلی رات، سہاگ رات کی مکمل تفصیل اردو میں، بیوی سے مباشرت کرنے کا آسان طریقہ

سوچیں جو لڑکی صرف آپ کی خاطر اپنے ماں باپ بہن بھائی بلکہ ساری فیملی چھوڑ کر آتی ہے کیا اس کا اتنا حق بھی نہیں بنتا کہ ہم اس کی تھوڑی سے ہیلپ کردیں اس کے کام میں ہاتھ بٹا دیں۔

8. بیگم سے کچھ نا چھپائیں

زندگی میں بعض باتیں ایسی ہوتی ہیں جو ہم کسی سے بھی شیئر نہیں کرنا چاہتے لیکن بیوی کا معاملہ اس سے الگ ہے کیونکہ بیوی ایک ایسی ذات ہوتی ہے جس کے ساتھ آپ نے پہاڑ جیسی زندگی گزارنی ہوتی ہے اس لیے کوشش کریں کہ اپنی وائف سے کچھ نا چھپائیں کیونکہ اگر آپ اس سے کچھ چھپائیں گے تو جب بھی اسے اس بات کا پتہ چلے گا اس کا آپ پر سے اعتماد اٹھ جائے گا۔

9. وائف ( بیوی ) کی فیلنگ کوسمجھنا 

انسان جذبات کا مجموعہ ہے اگر انسان میں سے جذبات نکال دیئے جائیں تو صرف گوشت کا پہاڑ رہ جائے گا جذبات سے خوشی غمی، دکھ سکھ کا پتہ چلتا ہے۔ اس لیے ایک اچھے شوہر کے لیے ضروری ہے کہ وہ اپنی بیوی کے جذبات کو سمجھے اور جو چیز اس کے مرضی کے خلاف ہو وہ چھوڑ دے اور جیسا وہ چاہتی ہے ویسی زندگی گزارنے کی کوشش کرے۔

10. بیوی کو وقت دینا 

آپ بیوی کی ضروریات پوری کریں یا نہ کریں لیکن بیوی کو خوش رکھنے کے لیے اس کے ساتھ زیادہ سے زیادہ وقت گزاریں۔ کیونکہ عورت بھوکی تو رہ سکتی ہے پر آپ اس کو اگنور کریں یہ برداشت نہیں کر سکتی۔ شادی سے پہلے زیادہ تر مرد اپنی ہونے والی وائف سے ہر وقت بات کرنے کے لیے تیار رہتے ہیں۔

شادی کی پہلی رات یعنی سہاگ رات کی کہانی، سہاگ رات منانے کا طریقہ، سہاگ رات کیسے منائیں،

شادی کے بعد بعض دفعہ ایسا ہوتا ہے کے ہفتوں ہفتوں ان کو بیوی سے بات کرنے کا بھی وقت نہیں ملتا۔ فرض کریں اگر آپ کہیں جاب (نوکری) کرتے ہیں تو دن میں ایک دو بار گھر کال کر کے بیوی کی خیریت پوچھ لیں۔ اس سے پوچھیں کہ کچھ چاہے تو نہیں۔ اس سے بیگم کے دِل میں آپ کے لیے پیار اور محبت مزید گہری ہو گی۔

11. غیر ضروری باتوں سے پرہیز 

بعض مردوں کی عادت ہوتی ہے کہ وہ لمبی لمبی چھوڑتے ہیں ایسا کرنے سے بیوی کی نظر میں آپ کی کوئی عزت نہیں رہتی۔ مرد چائے جتنا بھی گھٹیا کاروبار کرتا ہو بیوی برداشت کر لیتی ہے پر وہ یہ برداشت نہیں کر سکتی کہ مرد سے ہوتا کچھ نہ ہو اور ہر وقت بس لمبی لمبی چھوڑتا ہو۔ کیونکہ لمبی لمبی چھوڑنے والا حقیقت میں کچھ نہیں کر سکتا۔

اس كے علاوہ ایسی غیر ضروری باتیں اور بھڑکیں نہ ماریں جو آپ پوری نہیں کر سکتے۔ اس لیے ہمیشہ بیوی کے سامنے ویسی ہی رہیں جیسے آپ حقیقت میں ہیں کیونکہ پوری زندگی جھوٹ كے سہارے نہیں گزاری جا سکتی۔

یہی مضمون آپ رومن اردو میں بھی پڑھ سکتے ہیں

12. یاد رکھنے کی چیزیں:

اگر مرد ان باتوں کا خیال رکھے گا تواس کی ازواجی زندگی میں کبھی کوئی پرابلم نہیں ہو گی اور بیوی اس سے بہت خوش ہو گی۔

  • اپنی بیوی پر مکمل اعتماد کریں
  • اپنی بیوی کو احساس دلائیں کہ وہ آپ کے ساتھ محفوظ ہے
  • بیگم کو برابری کا درجہ دیں
  • محبت کا اظہار ضرور کریں، آئی لو یو، آئی مس یو جیسے جملے ضرور بولیں
  • مہینے میں کم اَز کم ایک گفٹ ضرور دیں اور بعض دفعہ سرپرائز ضرور دیں
  • بیوی کو آؤٹنگ پر لے کر جائیں
  • وائف کی سالگرہ ہمیشہ یاد رکھیں
  • ہفتے میں کم از کم دو بار بیوی كے پاس ضرور جائیں
  • بیگم کے لطیفوں پر مسکرائے
  • جب بیگم ساتھ ہو تو غیر عورتوں کو نہ دیکھیں اور نہ گھوریں
  • بیوی کے ہاتھ کے پکے ہوئے کھانے کو اتنا ہی پسند کریں جتنا والدہ کے کھانے کو کرتے ہیں
  • اپنی ساس اور میکے والوں کے لیے عزت اور محبت کا جذبہ رکھیں
  • بیگم کو میکے ضرور بھیجیں
  • بیوی ٹی وی پر اگر کچھ دیکھ رہی ہو تو اس کو آپ بھی انجوئے کریں

بیوی کو خوش رکھنے سے متعلق اگر کوئی چیز آپ کی سمجھ میں نہیں آئی ہے یا آپ اس تحریر کے حوالہ سے مزید معلومات حاصل کرنا چاہتے ہیں تو آپ ہمیں کمنٹس کر سکتے ہیں۔ آپ کے ہر سوال،ہر کمنٹس کا جواب دیا جائے گا۔ اگر آپ کو یہ تحریر اچھی لگی ہے تو آپ کا حق بنتا ہے کہ اسے فیس بک پر زیادہ سے زیادہ شیئر کریں۔ تاکہ آپ کے دوست احباب کی بھی بہتر طور پر راہنمائی ہو سکے۔

4 comments

اپنی رائے کا اظہار کریں