شطرنج کے کھیل کی ایجاد، انعام میں بادشاہی

شطرنج کا شمار مشکل اور قدیم ترین کھیلوں میں ہوتا ہے، یہ ایسا کھیل ہے جسے بادشاہوں کا کھیل کہا جاتا ہے، اس کھیل کا اصل نام چت رنگا تھا، جو بعد میں تبدیل ہو کر شطرنج ہو گیا۔

ابتداء میں یہ کھیل صرف راجہ ، مہاراجہ، شہزادے اور بادشاہ ہی کھیلا کرتے تھے۔ لیکن آج یہ کھیل پوری دنیا میں مقبول ہے۔ شطرنج کو انگریزی میں Chess کہا جاتا ہے۔

کیا آپ کو معلوم ہے کہ شطرنج دنیا کاوہ واحد کھیل ہے کہ جس کے موجد نے اس کے انعام کے طور پر بادشاہی حاصل کر لی، اور ایک بادشاہ کو اپنی سلطنت سے ہاتھ دھونے پڑے۔

شطرنج کے کھیل کے ایجاد

جب شطرنج کے موجد نے شطرنج کا کھیل ایجاد کیا، تو اس کے دل میں خواہش پیدا ہوئی کہ کیوں نہ میں بادشاہ وقت کو اس کھیل کے بارے میں بتاؤں، چنانچہ اس نے کھیل  سے متعلقہ اشیاء لیں اور بادشاہ کے دربار میں جا پہنچا، اور بادشاہ کو اپنے کھیل کے بارے میں تفصیل سے بتایا۔

بادشاہ کو شطرنج کا کھیل بہت پسند آیا، اس نے کھیل ایجاد کرنے والے شخص سے کہا کہ "تم نے بڑا دلچسپ کھیل ایجاد کیا ہے۔ اس کے لیے میں تمہیں منہ مانگا انعام دینے کو تیار ہوں۔”

شطرنج کے موجد کا انعام

موجدنے ازراہ کسر نفسی عرض کیا: "جناب کی قدر دہانی اور عزت افزائی ہی میرا انعام ہے۔ اس سے زیادہ مجھے کسی انعام کی ضرورت نہیں”

بادشاہ کے اصرار پر آخر کار موجد نے کہا۔ شطرنج کے چونسٹھ(64)  خانے ہوتے ہیں۔ اس کے پہلے خانے میں چاول کاایک  دانہ رکھیں، دوسرے خانے میں ڈبل کر دیں، یعنی 2 دانے، تیسرے خانے کو ڈبل کر دیں یعنی 4 دانے، اسی طرح ہر نئے خانے میں پرانے خانے سے دگنے چاول رکھتے جائیں ، یہی میرا انعام ہو گا۔

بادشاہ نے اس حقیر مطالبے کو اپنی توہین و تذلیل خیال کرتے ہوئے رنج وغصے کا اظہار کیا اور کہا:  "اس قدر قلیل مطالبہ میرے شایان شان نہیں ہے، تم کسی بڑے انعام کا مطالبہ کرؤ۔”

موجد نے عرض کی: آپ مجھے  بس یہی انعام دے دیں، میرے لیے یہی کافی ہے، اور ہاں جس مطالبے کو آپ حقیر خیال کرتے ہیں، اسے روئے زمین کے تمام خزانے بھی ادا نہیں کر سکتے ۔

بادشاہ نے کہا : "ان چونسٹھ خانوں کے چاولوں کی مجموعی مقدار دو سے تین کلو گرام چاولوں سے زیادہ نہ ہو گی، اتنے چاول تو ایک غریب آدمی بھی باآسانی دے سکتا ہے۔۔۔روئے زمین کے تمام خزانوں کے ساتھ اس کی کیا نسبت۔۔۔؟؟”

خیر بادشاہ نے خانوں میں چاول کے حساب سے انعام دینا شروع کیا تو چاول ختم ہو گئے، پھر خزانے کا منہ کھول دیا گیا ، سارا خزانہ بھی ختم ہو گیا تو پھر سطلنت کی ساری جائیدادیں دے دیں گئیں ۔ لیکن پھر بھی چند خانے خالے رہ گئے، چنانچہ بادشاہ سلامت کو اپنی سلطنت سے ہاتھ دھونا پڑے اور پوری کی پوری سلطنت بادشاہ نے شطرنج کے موجد کے حوالے کر دی۔

شطرنج کے کھیل میں چاولوں کا کردار

تصویر میں آپ دیکھ سکتے ہیں کہ چاولوں کی تعداد 9,223,372,036,854,780,000 تک جا پہنچی۔  اب حساب آپ نے کرنا ہے کہ ایک کلوگرام میں کتنے چاول آتے ہیں، اور بادشاہ کو کتنے من چاول یا اس کے برابر رقم  ادا کرنی پڑی ہو گی۔

یہی تحریر آپ رومن اردو میں بھی پڑھ سکتے ہیں

دوسری روایت کے مطابق بادشاہ نے مطالبے کے مطابق انعام دینے سے معذرت کر لی، اور کھیل کے موجد کو بہت زیادہ انعام و اکرام سے نوازہ، اوردربار میں اعلیٰ عہدے پر فائزہ کر دیا۔

اگر آپ کو یہ تحریر اچھی لگی ہے تو آپ کا حق بنتا ہے کہ اسے فیس بک پر زیادہ سے زیادہ شیئر کریں۔ تاکہ آپ کے دوست احباب کی بھی بہتر طور پر راہنمائی ہو سکے۔

اپنی رائے کا اظہار کریں