بلیو وہیل کیا ہے اور اس گیم کی وجہ سے لوگ خودکشی کیوں کر رہے ہیں

بلیو وہیل نام ہے ایک ایسی خطرناک گیم کا، جو اب تک ایک سو پچاس سے زائد بچوں کی جان لی چکی ہے۔یہ کوئی ایسی گیم نہیں ہے کہ جسے ہم انٹرنیٹ سے ڈون لوڈ کر سکیں، یا یہ کوئی اپلی کیشن یا پروگرام  نہیں ہے کہ جسے ہم گوگل پلے سٹور سے انسٹال کر سکیں۔ اس کی کوئی ویب سائیٹ بھی نہیں ہے۔کہ جہاں سے اس گیم کو آن لائن کھیلا جا سکے۔

اور نہ ہی تاش، لڈو، کیرم بورڈ کی طرح ایسی گیم ہے کہ کہیں بھی بیٹھ کر کھیل لی جائے۔ اور نہ ہی کرکٹ،ہاکی، فٹ بال،والی بال کی طرح کی کوئی گیم ہے کہ جس کو کھیلنے کے لیے میدان اور پلیئرز کی ضرورت ہو۔تو پھر یہ سوال پیداہوتا ہے بلیو وہیل Blue Whale  کیسی گیم ہے اور کیسے کھیلی جاتی ہو گی۔

دی بلیو وہیل چیلنج گیم کیا ہے

آج کے پوسٹ میں ہم آپ کو بتائیں گے کہ بلیو وہیل چیلنج  نامی گیم کیا ہے۔ اور اس گیم  کی وجہ سے لوگ خودکشی کیوں کر رہے ہیں۔اور اگر یہ اتنی ہی خطرناک گیم ہے تو پھر لوگ یہ گیم کیوں کھیل رہے ہیں۔ اس کے علاوہ ہم آپ کو یہ بھی بتائیں گے کہ آپ کے جاننے والوں میں سے کون کون اس وقت یہ گیم کھیل رہا ہے۔ اور کیسے  ان کو خودکشی جیسے برے فعل سے روکا جا سکتا ہے۔

بلیو وہیل بازو پر کٹ کے نشان

بلیو وہیل کوئی ایسی گیم نہیں ہے کہ جسے آپ کمپیوٹر ، لیپ ٹاپ یا موبائل فون (سمارٹ فون)  پر کھیل سکیں، تو آپ کے ذہن میں سوال تو پیدا ہو رہا ہو گا کہ پھر یہ کیسی گیم ہے۔جو پھیل تو انٹرنیٹ اور سوشل میڈیا کی وجہ سے رہی ہے اور اسے ہم ڈؤن لوڈ اور انسٹال بھی نہیں کر سکے۔

دی بلیو وہیل چیلنج گیم کس طرح کھیلی جاتی ہے، اور اس کے کون کون سے لیول ہیں

اصل میں بیلو وہیل کوئی گیم نہیں ہے۔ یہ ایک طرح کا چیلنج ہےبلکہ مختلف قسم کے چیلنجوں کا مجموعہ ہے۔جن کی تعداد 50 ہے۔ اس لحاظ سے آپ کہہ سکتے ہیں کہ یہ ایک ایسی گیم ہے جو پچاس لیول (راؤنڈ) پر مشتمل ہوتی ہے اور ہر روز آپ کو ایک نئے چیلنج کا سامنا کرنا پڑتا ہے۔مطلب آپ نے پچاس دنوں میں پچاس ٹاسک مکمل کرنے ہوتے ہیں۔

اس گیم کی شروعات سوشل میڈیا سے ہوتی ہے۔بلیو وہیل کی انتظامیہ کے کارکنان سوشل میڈیا پر سرچ کرتے رہتے ہیں اور دیکھتے ہیں کہ کون سا ایسا انسان ہے جو زندگی سے مایوس ہے  یا ذہنی ڈپریشن کا شکار ہے۔ ایسے لوگوں کے بارے میں مکمل معلومات حاصل کرنے کے بعد یہ لوگ سوشل میڈیا پر ایسے لوگوں کے دوست بن جاتے ہیں اورانہیں یہ گیم کھیلنے کا مشورہ دیتے ہیں۔

بلیو وہیل ہونٹوں پر کٹ لگانا

زندگی سے مایوسی یا ڈپریشن کا شکار افراد یہ گیم کھیلنے کے لیے فوراً تیار ہو جاتے ہیں۔ کیونکہ ایسے لوگوں کو زندگی کی کوئی قدر نہیں ہوتی۔ بلکے یہ لوگ تو زندگی سے جان چھڑانے کے درپے ہوتے ہیں۔

بلیو وہیل کا ایڈمن روزانہ آپ کو ایک نیا ٹاسک دیتا ہے کہ آپ نے آج یہ کرنا ہے۔ اس گیم کے شروع کے ٹاسک عام اور سادہ ہوتے ہیں۔ اور جیسے جیسے دن گزرتے جاتے ہیں، ٹاسک مشکل سے مشکل ہوتے جاتے ہیں۔ہر روز آپ جو ٹاسک مکمل کرتے ہیں۔ آپ نے اس ٹاسک کی تصویر یا ویڈیو کلپ بنا کر بیلو وہیل کی انتظامیہ کو بھیجنی ہوتی ہے۔

اس کے ساتھ ساتھ  بیلو وہیل کی انتظامیہ آپ سے آپ کی ذاتی اور نجی معلومات بھی حاصل کرتی رہتی ہے۔ جس کا مقصد یہ ہوتا ہے کہ اگر آپ گیم کے کسی بھی ٹاسک پر پہنچ کر آگے نہیں کھیلنا چاہتے تو وہ آپ کو بلیک میل کر کے گیم جاری رکھنے پر مجبور کر سکیں۔ گیم کا آخری ٹاسک خودکشی کرنا ہوتا ہے ۔

جس سے انکار کی صورت میں دھمکی دی جاتی ہے کہ اگر آپ نے خودکشی نہ کی تو آپ کی ذاتی معلومات اور وہ تمام ویڈیوزجو آپ نے بنا کر بھیجی ہیں  شائع کر دی جائیں گی۔ اسی وجہ سے گیم شروع کرنے والے افراد  کے لیے ایک بار گیم شروع کر کے اس گیم سے باہر نکلنا بہت مشکل ہوتا ہے۔

بلیو وہیل گیم کے لیول(راونڈز)

بلیو وہیل میں مختلف قسم کے ٹاسک دیئے جاتے ہیں۔ ہر روز ایک نیا ٹاسک دیا جاتا ہے۔بیلو وہیل کے ٹاسک کچھ اس طرح کے ہوتے ہیں۔

  • اس ٹاسک میں بازو پر بلیڈ سے F57 لکھنا ہوتا ہے
  • صبح 4:20 پر اٹھنا ہوتا ہے اور ڈراونی ویڈیو دیکھنی ہوتی ہے۔
  • بازو پر بلیڈ سے ہلکے ہلکے تین کٹ لگانے ہوتے ہیں
  • کاغذ پر وہیل کی تصویر بنانی ہوتی ہے۔
  • اگر آپ گیم کھلنا چاہتے ہیں تو بلیڈ سے Yes  لکھیں اگر نہیں تو اپنے جسم پر بلیڈ سے 30 کٹ لگائیں۔
  • صبح چار بج کر بیس منٹ پر چھت کے آخری کنارے پر جا کر اپنی سیلفی بنا کر بھیجنی ہوتی ہے۔
  • بازو پر بلیڈ کی مدد سے کٹ لگاتے ہوئے وہیل کی تصویر بنانی ہوتی ہے۔
  • سوشل میڈیا پر آئی ایم وہیل I am Whale کا سٹیٹس اپ لوڈ کرنا ہوتا ہے۔
  • اس ٹاسک میں اپنے ہاتھ پر دس بار سوئی چبھونا ہوتی ہے۔
  • اپنی عریاں تصویریں بنا کر بلیو وہیل کی انتظامہ کو بھیجنی ہوتی ہیں۔
  • منشیات کا استعمال کرنا ہوتا ہے۔جو بتدریج بڑھتا چلا جاتا ہے۔
  • اس ٹاسک میں پورا دن ڈراونی فلمیں دیکھنا ہوتی ہیں۔
  • خفیہ ٹاسک مکمل کرنا ہوتا ہے۔
  • اس ٹاسک میں بلیڈ سے ہونٹوں پر کٹ لگا کرتصویر بنا کر ایڈمنسٹریٹر کو بھیجنی ہوتی ہے۔
  • اس ٹاسک میں دو گھنٹے تک چھت کے کنارے پر آنکھیں بند کر کے کھڑا ہونا ہوتا ہے۔
  • پل کے کنارے پر مخصوص وقت تک کے لیے کھڑا ہونا ہوتا ہے۔
  • اس ٹاسک میں کانوں میں فل والیم میوزک لگا کر آدھا گھنٹہ تک ریل کی پٹری پر لیٹنا ہوتا ہے۔
  • بازو پر انجکشن لگانا ہوتا ہے
  • اس ٹاسک میں پورا دن کسی سے بات نہیں کرنی ہوتی ہے۔
  • اس ٹاسک میں اپنی موت کی تاریخ کا اعلا ن کرنا ہوتا ہے اور اس کو سچ ثابت کرنا ہوتا ہے۔
  • آپ نے حلف دینا ہوتا ہے کہ آپ وہیل ہیں۔

30 ٹاسک مکمل ہونے کے بعد یہی ٹاسک تھوڑے بہت ردوبدل کے ساتھ دوبارہ دیئے جاتے ہیں۔ تاہم 30 دنوں کے بعد ہر روز 4:20 منٹ پر اٹھنا ہوتا ہے، روزانہ 2 گھنٹے کی ڈراونی فلم اور آدھا گھنٹہ خوفناک میوزک فل والیم میں سننا ہوتا ہے۔ منشیات کا استعمال کرنا ہوتا ہے۔ اور روزانہ جسم پر بلیڈ سے ایک کٹ لگانا ہوتا ہے۔اس کے علاوہ بیلو وہیل میں بعض افراد کو اس قسم کے ٹاسک بھی ملتے ہیں۔

  • اپنے والدیا والدہ میں سے کسی کو تھپڑماریں اور اس کی ویڈیو بنا کر بھیجیں۔
  • کسی مشہورشخصیت پر جھوٹا الزام لگا کر دکھائیں۔

گیم کے پچاسویں(50) ٹاسک پر کسی اونچی منزل پر چڑھ کر چھلانگ لگانی ہوتی ہے یا پھر بلیڈ سے اپنی نس کاٹ کر اپنی زندگی کا خاتمہ کرنا ہوتا ہے۔گیم کے ٹاسک اس قسم کے ہیں کہ دوران کھیل انسان اتنا سفاک ہو جاتا ہے کہ اسے کسی بھی بات کی کوئی پرواہ نہیں ہوتی۔ وہ بس ہر حال میں گیم میں کامیابی حاصل کرنا چاہتا ہے۔

دی بلیو وہیل چیلنج سے کیسے ختم کو بچایا جائے

تاہم اگر کوئی آخری ٹاسک پر پہنچ کر گیم کھیلنے سے انکار کر دے تو بلیو وہیل کی انتظامیہ اسے بلیک میل کرتی ہے کہ اگر تم نے آخری ٹاسک مکمل نہ کیا تو ہم تمہاری ساری تصویریں اور ویڈیو نہ صرف سوشل میڈیا پر شیئر کر دیں گے بلکہ تمہارے خاندان والوں سے لے کر دوست احباب تک سب کو بھیج دیں گے۔

ایسے میں گیم کھیلنے والے کے پاس خود کشی کے سوا کوئی چارہ نہیں ہوتا کیونکہ اس نے اپنی عریاں تصویریں تک بلیو وہیل کی انتظامیہ کو دی ہوتی ہیں۔ اور کوئی ذی ہوش شخص یہ برداشت نہیں کر سکتا کہ اس کی ایسی تصویریں یا ویڈیو ہر کوئی دیکھے۔

بلیو وہیل گیم کھیلنے کی وجوہات

اتنا کچھ پڑھنے کے بعد ذہن میں سوال پیدا ہوتا ہے کہ جب لوگ جانتے بھی ہیں کہ اس گیم کا مقصد ہی انسان کی جان لینا ہے تو پھر وہ یہ گیم کھیلتے ہی کیوں ہیں۔ تو اس کی بہت سے وجوہات ہو سکتی ہیں۔

  • اس گیم کو کھیلنے کی سب سے بڑی وجہ چیلنج ہے۔ اور اسی وجہ سے اس گیم کا نام بلیو وہیل چیلنج ہے۔ زیادہ تر افراد کی اس گیم میں مبتلا ہونے کی وجہ یہ ہوتی ہے کہ دوسرے ان کو چیلنج کرتے ہیں کہ تم ایسا نہیں کر سکتے، یا تم یہ گیم نہیں کھیل سکتے، تو بندہ طیش میں آ کر کہتا ہے کہ میں اُس کو یہ کر کے دکھاؤں گا۔
  • انسانی کی طبیعت جنونی ٹائپ کی ہے وہ چاہتا ہے کہ مجھے کوئی ایسا ٹاسک ملے جو میرے سوا کوئی نہ مکمل کر سکتا ہو، یا میں کوئی ایسا ٹاسک مکمل کروں جو میرے جاننے والوں میں سے کوئی نہ کر سکتا ہو، تو ایسے میں اگر ایسی سوچ رکھنے والے نواجون کا سامنا بلیو وہیل نامی گیم سے ہو جائے تو اس کی کچھ الگ کرنے کی خواہش اسے موت کی نیند سلا دیتی ہے۔
  • بعض لوگ خود کو بہت شاطر سمجھتے ہیں اور وہ سمجھتے ہیں کہ میں بلیو وہیل کی انتظامیہ  کو دھوکہ دے کر اسے غلط معلومات یا تصویریں اور ویڈیو بھیج کر گیم جیت جاؤں گا۔ لیکن ایسے لوگوں کو معلوم ہی نہیں ہوتا کہ اس گیم کے لیول آہستہ آہستہ اسے ذہنی پاگل بنا دیتے ہیں۔ اور وہ سچ میں گیم کا حصہ بن کر ہمیشہ کے لیے فنا ہو جاتا ہے۔
  • بوریت بھی لوگوں کو اس گیم کی طرف راغب کرنے کی اہم وجہ ہے۔ کیونکہ جب بندہ بور ہو رہا ہوتا ہے تو وہ چاہتا ہے کہ وہ کسی سرگرمی وغیرہ میں حصہ لے۔ تاہم آوٹ ڈور گیمز کے فقدان کے سبب ایسے لوگ خود کو بیلو وہیل جیسی کسی گیم میں الجھا کر اپنے فالتو وقت کو رنگین بنانے کی کوشش کرتے ہیں جو آخر کار ان کی جان لے لیتا ہے۔
  • ڈپریشن میں مبتلا افراد اس گیم میں زیادہ دل چسپی لیتے ہیں جس کی بنیادی وجہ یہ ہوتی ہے کہ ڈپریشن میں مبتلا شخص کا رجحان خودکشی کی طرف ہوتا ہے ۔ اور یہ گیم مشہور ہی خودکشی کے حوالے سے ہے ۔(ڈپریشن کے حوالے سے آپ ہماری پوسٹ ڈپریشن کیا ہے، اس کی علامات کیا ہیں اور ڈپریشن کا علاج کیسے کیا جائے ، پڑھ سکتے ہیں)

کیسے پتا کریں کہ کون کون بلیو وہیل گیم کھیل رہا ہے؟

بلیو وہیل کے آٹھویں دن آپ کو یہ ٹاسک ملتا ہے کہ آپ نے سوشل میڈیا پر آئی ایم بلیو وہیل I am blue Whale  کا سٹیٹس اپ لوڈ کرنا ہے۔ اب آپ نے یہ کرنا ہے کہ فیس بک کے سرچ میں جا کر I am blue Whale کی سرچ کریں۔

اور پھر پوسٹ پر کلک کریں اور چیک کریں کہ آپ کے کس کس دوست نے یہ سٹیٹس اپ لوڈ کیا ہوا ہے۔ اس کے بعد یہ دیکھیں کہ کس تاریخ کو کیا ہوا ہے۔ کیونکہ یہ سٹیٹس بلیو وہیل کے 7 ٹاسک مکمل کرنے کے بعد آٹھویں دن اپ لوڈ کرنا ہوتا ہے۔ اس سے آپ کو اندازہ ہو جائے گا کہ وہ اس وقت گیم کے کس لیول پر ہے۔ ایسے میں آپ اس کو سمجھا کر اس گیم سے دور رکھ سکتے ہیں۔

گیم سے دوسروں کو بچانے کا طریقہ

زندگی بہت پیاری ہے۔ اگر آپ کو اس قسم کا کوئی میسج آتا ہے ۔یا کوئی آپ کو چیلنج کرتا ہے تو اس کی باتوں پر دھیان نہ دیں۔اور اگر آپ کا کوئی دوست وغیرہ یہ گیم کھیل رہا ہے تو اسے اس موت کے کھیل سے روکنے کی پوری پوری کوشش کریں۔ کیونکہ

جس نے ایک انسانی جان کو بچایا اس نے گویا پوری انسانیت کو بچالیا۔(القرآن)

  1. مایوسی اور ناامیدی انسان کو ڈپریشن کا مریض بنا دیتی ہیں۔ اور ڈپریشن کا مریض اپنی زندگی سے تنگ ہو کر خودکشی کے بارے میں سوچنے لگتا ہے۔ اس لیے سب سے پہلے ڈپریشن کا علاج کروانے چاہیے۔ ڈپریشن کے حوالے سے آپ ہماری پوسٹ، ڈپریشن کیا ہے۔ ڈپریشن کی بیماری، اس کی علامات، وجوہات اور علاج پڑھ کر ڈپریشن سے ہمیشہ ہمیشہ کے لیے نجات پا سکتے ہیں۔
  2. گھریلو ناچاکی، لڑائی جھگڑے، بےروزگاری ،اور ناکامی ایسے مسائل ہیں جو انسان کو جینا دو بھر کر دیتے ہیں۔ ایسے میں ضرورت اس امر کی ہوتی ہے کہ زندگی کو خوشحال اور بھرپور طریقے سے کیسے جیاجائے، کامیابی کیسے حاصل کی جائے۔ اس حوالے سے آپ ایزی استاد کا ایزی لائف سے متعلقہ سیشن پڑھ سکتے ہیں۔ اس سیشن میں آپ کو زندگی کے تمام بنیادی تصورات سے لے کر زندگی کو آسان بنانے والی تمام چھوٹی بڑی چیزوں کے بارے میں تفصیل سے بتایا جاتا ہے۔
  3. اگر آپ کا کوئی عزیز بلیو وہیل گیم کھیل رہا ہے اور آپ کے منع کرنے کے باوجود بھی کہ کھیل جاری رکھے ہوئے ہے تو اسے ایک بار اس بات پر راضی کریں کہ ایک دفعہ وہ یہ تحریر پڑھ لے۔ انشاء اللہ یہ تحریر پڑھنے کے بعد اسے اس کھیل کے تمام لوازمات کے بارے میں پتا چل جائے گا اور وہ یہ گیم ختم کر دے گا۔اور اس تحریر کو زیادہ سے زیادہ پیجز اور گروپ میں شیئر کریں ، ہماری چھوٹی سی کاوش سے اگر کسی ایک کی بھی جان بچ جاتی ہے تو اس سے بڑی خوش قسمتی کی کوئی بات نہیں ہے۔
  4. اپنے آپ کو سوشل اور سماجی سرگرمیوں میں مصروف رکھیے، مصروف رہنے سے فالتو کی سوچیں اور فالتو وقت نہیں ملتا، اس لیے کوشش کریں کہ زیادہ سے زیادہ کرکٹ، فٹبال، ہاکی، والی بال جیسی گیمز کھیلں اس سے نہ صرف آپ کا وقت اچھا گزرے گا بلکہ زیادہ دوست بھی بنیں گے۔ اس کے علاوہ اپنے گھر، خاندان، محلے کے معاملات میں دلچسپی لیں اور ان کو حل کرنے کی کوشش کریں۔ اس سے آپ کا دھیان بٹا رہے گا۔

بلیو وہیل سے متعلقہ یہی تحریر آپ رومن اردو میں بھی پڑھ سکتے ہیں۔

خوشیوں و کامرانیوں سے بھرپور گیم

دنیا میں صرف بلیو وہیل جیسی گھٹیاگیمز ہی نہیں ہے۔ بلکہ دنیا میں ایسی ایسی گیمز بھی ہیں کہ جو کھیلنے سے آپ کی زندگی بدل کر رہ جاتی ہے۔ایزی استاد میں آج ہم  آپ کو ایک ایسی ہی گیم کے بارے میں بتائیں گے کہ جس کے کھیلنے سے سب کچھ مل جاتا ہے۔ یہ گیم  بوریت اور تنہائی دور کر کے زندگی میں خوشی اور مسکراہٹ لاتی ہے۔مایوسی اور ناامیدی کو ختم کرکے جینے کا حوصلہ دیتی ہے۔ زندگی سے ٹینشن اور پریشانیوں کو ختم کر کے امن و سکون اور اطمینان قلب لاتی ہے۔

اس گیم کے کھیلنے سے  زندگی بہت آسان ہو جاتی ہے۔ دولت ،عزت، شہرت، کامیابی، کامرانی سب کچھ مل جاتا ہے۔ بس شرط ہے تو صرف ایک، گیم دل سےکھیلی جائے۔اور مجھے یقین ہے کہ یہ گیم کھیلنے کے بعد آپ کو کسی بھی گیم کی ضرورت نہیں رہے گی۔ آپ کی زندگی میں خوشحالی ہی خوشحالی ہو گی، سکون ہی سکون ہو گا۔ گیم کا طریقہ کار یہ ہے۔

صبح فجر کے وقت بیدار ہوں، وضو کر کے خشوع و خصوع کے ساتھ باجماعت نماز فجر ادا کریں،اور اسی طرح ظہر،عصر،مغرب اور عشاء کی نماز باجماعت ادا کریں۔ آپ کو اپنی زندگی میں سب کچھ مل جائے گا۔اور ہر قسم کی پریشانیوں سے نجات حاصل ہو جائے گی۔اللہ ہم سب کا حامی ہو ناصر ہو۔

اپنی رائے کا اظہار کریں