موٹاپے سے نجات کے دس آسان قدرتی طریقے | موٹاپے کا علاج

اگر کسی انسان کا وزن، قد، عمر اور جسمانی ساخت کے حوالہ سے نارمل وزن سے سات آٹھ کلوگرام زائد ہو تو اسے موٹا سمجھا جاتا ہے۔ یعنی جسم میں چربی کی مقدار ضرورت سے زائد ہونے کو موٹاپا کہا جاتا ہے۔ میڈیکل حوالہ سے موٹاپا انسان کی ایک طبی حالت ہے جس میں انسانی جسم پر چربی چڑھ جاتی ہے، انسان کا وزن زیادہ ہو جاتا ہے اور پیٹ نکل آتا ہے۔

انسان کتنا ہی خوش شکل کیوں نہ ہو لیکن اگر اس پر موٹاپاغالب آجائے تو اس کی شخصیت کو گرہن لگ جاتا ہے اورانسان کی شخصیت اور شکل نامکمل سی لگتی ہے۔جس سے نہ صرف انسان کا جسم بھدا ہو جاتا ہے بلکہ دوست احباب بھی مذاق اڑانا شروع ہو جاتے ہیں۔

یہ بھی پڑھیے : ڈپریشن کیا ہے، ڈپریشن کی علامات، وجوہات اور علاج

جو بیماریاں حسن و صحت کی دشمن ہیں موٹاپا ان میں سرفہرست ہے ،موٹاپا نہ صرف ظاہری شخصیت کو تباہ کردیتا ہے بلکہ یہ مختلف بیماریوں کا مجموعہ بھی ہے کیونکہ اس سے ذیابیطس، بلڈپریشر، امراض قلب ، فالج اور لاتعداد بیماریوں کا خطرہ بھی بڑھ جاتا ہے۔اسی لیے ماہرین کہتے ہیں کہ جتنی انسان کی عمر کم اور وزن زیادہ ہو گا، اتنا ہی اس کی صحت پر برا اثر پڑے گا۔

موٹاپے سے نجات کے طریقے

موٹاپا ایک عالمی مسئلہ ہے۔ پاکستان کے ساتھ ساتھ پوری دنیا میں موٹاپے سے متاثرہ افراد کی تعداد بڑھتی جا رہی ہے۔ گزشتہ سال کی ایک رپورٹ کے مطابق موٹاپے سے سب سے زیادہ متاثرہ ممالک میں پاکستان نویں نمبر پر ہے۔

موٹاپا انسان کی ظاہری حالت کے ساتھ ساتھ اندرونی صحت کو بھی تباہ کر کے رکھ دیتا ہے۔انسان کے جسم پر چربی کی تہیں چڑھتی جاتی ہیں ۔ جس سے اعضاء کی کارکردگی کم سے کم ہوتی جاتی ہے۔ اگر موٹاپے کو کم کرنے کے لئے بروقت اقدامات نہ کیے جائیں تو انسان کئی قسم کی خطرناک بیماریوں میں بھی مبتلا ہو سکتا ہے۔

یہ بھی پڑھیے: خراٹوں سے مکمل نجات کے آسان طریقے

ماہرین کا کہنا ہے کہ وزن گھٹانے کا کوئی طریقہ اس وقت تک کارگر ثابت نہیں ہوسکتا جب تک کہ وزن بڑھنے کا اصل سبب معلوم نہ ہوجائے۔ موٹاپا صرف چینی اور چکنائی کے زیادہ استعمال اور زیادہ بیٹھے رہنے سے ہی نہیں ہوتا ، بلکہ اس کے اور بھی بہت سے اسباب ہیں۔ کچھ لوگ اس لیے موٹے ہوجاتے ہیں کیونکہ انہیں اپنا پیٹ بھر جانے کا پتا ہی نہیں چلتا اور وہ کھاتے ہی چلے جاتے ہیں۔

موٹاپا کم کرنے کا طریقہ، موٹاپے کا دیسی علاج اور موٹاپے سے چھٹکارہ حاصل کرنے کے طریقے

موٹاپے کی اہم وجہ ضرورت سے زائد کھانا پینااور غیر متوازن خوارک کا استعمال ہے۔موٹاپے سے نجات کے لیے لوگ کیا کچھ نہیں کرتے ، کچھ لوگ تو ڈائٹنگ کے نام پر کھانا پینا بھی چھوڑ دیتے ہیں لیکن موٹاپا ہے کہ جان ہی نہیں چھوڑتا۔

یہ بھی پڑھیے: معدے کی تیزابیت اور سینے کی جلن کا علاج

موٹاپے کے علاج کے لئے جو بھی طریقہ اپنایا جائے اس میں محنت اور مشقت ایک لازمی جزو ہوتا ہے اور یہ ایک طویل اور صبر آزما کام ہوتا ہے ،تا ہم موٹاپا کم کرنا کوئی مشکل کام نہیں ہے۔ بس ذرا سی ہمت کیجیے، آرام پسندی اور سستی کو طلاق دے دیجیے پھر دیکھئے آپ کی صحت کیسے دن دوگنی رات چوگنی ترقی کرتی ہے۔

موٹاپے سے نجات کے لیے آپ درج ذیل طریقے اور ٹوٹکے استعمال کر سکتے ہیں۔

  1. ورزش کرنا، کھیلنا کھودنا

ورزش سے جہاں صحت پردیگر اچھے اثرات مرتب ہوتے ہیں وہیں یہ موٹاپے کو کم کرنے میں بھی معاون ثابت ہوتی ہے۔ ورزش کرنے سے انسان چست و توانا ہوتا ہے اور اس کا وزن کم ہونا شروع ہو جاتا ہے۔ اس لیے کوشش کریں کہ روزانہ کی بنیاد پر ورزش کی جائے۔

اگر آپ کا موٹاپا آپ کو ورزش نہیں کرنے دیتا تو اپنے آپ کو کھیلوں میں مشغول کر لیں۔ اس سے بھی آپ کے وزن میں خاطر خواہ کمی واقع ہو گی۔موٹاپا کم کرنے کے لیے آپ تیراکی، فٹ بال، کرکٹ، ہاکی، والی بال وغیرہ کھیل سکتےہیں۔

صبح کی وقت واک کرنا یا روزانہ کم از کم پانچ کلومیٹر تک سائیکل چلانے سے بھی موٹاپے میں خاطر خواہ کمی واقع ہوتی ہے۔اس کے علاوہ ایسی تمام مصروفیات جن میں تھکاوٹ اور جسم سے پیسنے کا اخراج ہو موٹاپے کو کم کرتی ہیں۔

  1. دہی کا استعمال

لاوال یونیورسٹی کی تحقیق کے مطابق دہی میں شامل بیکٹریا پروبائیوٹکس خواتین کے جسمانی وزن میں کمی لاتا ہے۔ تحقیق کے دوران موٹاپے کے شکار مرد و خواتین کوپانچ ماہ تک اس بیکٹریا سے تیار کردہ گولیاں کھلائی گئیں، جس کے بعد یہ بات سامنے آئی کہ خواتین کے وزن میں اوسطاًنو سے گیارہ پونڈز تک کمی ہوئی۔

  1. پانی کا زیادہ استعمال

اگر آپ موٹاپے کا شکار ہیں اور موٹاپا کم کرنا چاہتے ہیں تو اپنا پانی کا استعمال زیادہ سے زیادہ کریں۔ روزانہ کم از کم دو سے تین لیٹر پانی پئیں۔ پانی انسان کی صحت کے لئے بہت مفیدہوتا ہے۔ یہ ہمارے جسم سے فاسد مادوں کے اخراج میں مدد دیتا ہے۔ انسانی جسم کے خلیوں کو بھی بہترین کارکردگی کے لئے پانی کی بہت ضرورت ہوتی ہے۔

  1. روزانہ سیب کا استعمال

واشنگٹن اسٹیٹ یونیورسٹی کی تحقیق کے مطابق سبز رنگ کے سیبوں کا روزانہ استعمال نہ صرف پیٹ بھرنے کے احساس کو زیادہ دیر تک برقرار رکھتا ہے ۔بلکہ یہ معدے میں موجود صحت کے لیے فائدہ مند بیکٹریا کی تعداد بھی بڑھاتا ہے۔

تحقیق میں بتایا گیا ہے کہ ان سیبوں کے روزانہ استعمال سے صحت مند بیکٹریا کی تعداد بڑھتی ہے جو موٹاپے کے خلاف جنگ میں مددگار ثابت ہوتے ہیں۔اس لیے اگر یہ کہا جائے تو غلط نہ ہو گا کہ روزانہ ایک سیب کھانا نہ صرف ڈاکٹر سے دور رکھتا ہے بلکہ موٹاپے سے بھی بچاتا ہے۔

  1. پھلوں اور سبزیوں کا استعمال

سبزیاں نہ صرف انسانی صحت کی بہتری میں اہم کردار ادا کرتی ہیں بلکہ یہ انسان کو موٹاپے سے بھی بچاتی ہیں۔ اسی لیے ہر موسم کی سبزی اور پھل کو اپنی خوراک کا حصہ بنایئے، ان میں موجود وٹامن ، معدنیات اور اینٹی آکسیڈنٹس آپ کو تروتازہ رکھتے ہوئے غذا کی کمی کو پورا کرتی ہے سبزیوں اور پھلوں کا استعمال بڑھانے سے پورے جسم کو فائدہ ہوتاہے۔

اپنی کھانے کی پلیٹ میں آدھی مقدار سبزیوں کی رکھیں۔ سبزیوں کو اتنا مت پکائیں کہ وہ اپنی غذائیت ہی کھو بیٹھیں۔ سبزیوں کو کچا یا گِرل کر کے کھانا زیادہ مفید ہے۔ سبزیوں کے ساتھ ساتھ پھلوں کا استعمال بھی ضرور کریں۔ صبح کے ناشتے میں انڈے اور دودھ کے ساتھ پھل بھی استعمال کریں۔ اور دن میں ایک آدھ بار کوئی نہ کوئی پھل ضرور کھائیں۔

  1. مرچوں کا استعمال

لال مرچ کا استعمال موٹاپے کو کم کرنے میں مدد دیتا ہے۔ کیونکہ یہ حراروں کے علاوہ چکنائی کو بھی جلانے میں کام آتی ہے۔ مرچیں جسم میں جاکر معدے کو بھر دیتی ہیں اور ایسے اعصاب کو سرگرم کردیتی ہیں جو جسم کو کہتے ہیں کہ بہت کھالیا اور زیادہ کھانا ممکن نہیں ہے۔

  1. بیکری کی مصنوعات سےپرہیز

موٹاپا ہونے کی ایک اہم وجہ بیکری کی مصنوعات اور میٹھی اشیاء کا استعمال ہے۔ یہ تمام اشیا کھانے میں جتنی مزیدار ہوتی ہیں، صحت کے لئے اتنی ہی نقصان دہ ہوتی ہیں۔ میٹھی اشیا جگر پر چکنائی ذخیرہ کرتی ہیں اور بیکری مصنوعات کے استعمال سے کولیسٹرول لیول بڑھتا ہے۔

اس لئے اگر موٹاپے کو بھگانا ہے تو سب سے پہلے ان چیزوں کا استعمال ختم کرنا ہو گا ، یاد رکھیں احتیاط علاج سے بہتر ہوتی ہے۔

  1. سردی میں کپکپانا

سڈنی یونیورسٹی کی تحقیق کے مطابق سردی میں کپکپانا اتنا ہی موثر ہے جتنا ورزش کرکے انسان وزن کم کرتا ہے، کیونکہ دونوں سے توانائی کے حرارے (کیلوریز) جلتے ہیں۔ تحقیق میں سب سے اہم بات یہ سامنے آئی کہ صرف دس سے پندرہ منٹ تک کپکپانا اتنا ہی فائدہ مند ہے جتنا ایک گھنٹے تک ورزش کرنا۔

اگر آپ موٹاپے سے پریشان ہیں تو یہ اب کوئی مسئلہ ہی نہیں بس سرد موسم میں چہل قدمی سے لطف اندوز ہونے کے ساتھ کچھ دیر کپکپائیں اور وزن میں کمی لائیں۔

  1. جلدی سونا

بچوں کو جلد سلانے کی عادت انہیں موٹاپے سے بچانے کا سب سے آسان اور سستا طریقہ ہے۔ فلاڈلفیا کی ٹمپل یونیورسٹی کی تحقیق کے مطابق بچپن میں موٹاپے کا سبب صرف فاسٹ فوڈ، میٹھے مشروبات اور کم ورزش نہیں بلکہ نیند کی کمی بھی اس کا ایک اہم عنصر ہے۔

تحقیق میں بتایا گیا ہے کہ بہتر اور زیادہ نیند سے بچوں میں کیلوریز لینے کی مقدار کم ہوتی ہے اور جسمانی وزن قابو میں رہتا ہے۔ تحقیق کے نتائج سے معلوم ہوا ہے کہ اسکول جانے کی عمر کے بچوں کی رات کی نیند میں اضافہ موٹاپے پر قابو پانے میں مددگار ثابت ہوتا ہے۔

  1. آرام سے کھانا

ٹیکساس کرسٹین یونیورسٹی کی تحقیق کے مطابق آہستگی سے کھانے اور چھوٹے لقمے لینے سے لوگوں کو کھانے کے کچھ دیر بعد بھوک کا احساس کم ہوتا ہے۔ اسی طرح جو لوگ سست روی سے کھاتے ہیں وہ زیادہ پانی بھی پیتے ہیں جس سے انہیں طبیعت سیر ہونے کا احساس زیادہ ہوتا ہے۔

محقق پروفیسر مینا شاہ کے مطابق کھانے کی رفتار میں کمی سے زیادہ کیلوریز جسم کا حصہ نہیں بنتیں، جس سے موٹاپے کا خطرہ کم ہوجاتا ہے۔خوراک کو مناسب طریقے سے چبا کر نگلنا جسمانی وزن میں کمی کا آسان ترین نسخہ ہے۔

اس مضمون سے متعلقہ اگر کوئی چیز آپ کی سمجھ میں نہیں آئی ہے یا آپ اس تحریر کے حوالہ سے مزید معلومات حاصل کرنا چاہتے ہیں تو آپ ہمیں کمنٹس کر سکتے ہیں۔ آپ کے ہر سوال،ہر کمنٹس کا جواب دیا جائے گا۔

اگر آپ کو یہ تحریر اچھی لگی ہے تو آپ اسے سوشل میڈیا پر بھی شیئر کر سکتے ہیں۔ تاکہ آپ کے دوست احباب کی بھی بہتر طور پر راہنمائی ہو سکے۔

ضروری نوٹ: موٹاپے سے متعلقہ یہ تحریر محض معلومات عامہ کے لئے شائع کی جا رہی ہے۔ ان ترکیبوں، طریقوں اور ٹوٹکوں پر عمل کرنے سےپہلے اپنے معالج (طبیب،ڈاکٹر) سے مشورہ ضرور کریں۔اور دوران عمل اپنے معالج سے رابطہ میں رہیں۔

اپنی رائے کا اظہار کریں